ایک باپ کی اپنے

ایک باپ کی اپنے بیٹے کو نصیحت

ایک باپ کی اپنے بیٹے کو نصیحت

ایک دن حضرت زین العابدین رضی اللہ تعالی عنہ اپنے بیٹے کو نصیحت فرما رہے تھے ۔بیٹا چار آدمیوں کے ساتھ راستہ چلتے ہوئے تھوڑی سی دیر بھی نہ چلنا ۔ ورنہ یہ تمہارا بہت نقصان کر دیں گے ۔

بیٹا حیران ہوا اور پوچھنے لگا ابا جان کیا وہ اتنے خطرناک انسان ہے کہ ان کے ساتھ تھوڑی سی دیر چلنا بھی خطرے سے خالی نہیں ۔ آخر یہ چاروں لوگ کون ہیں ؟

حضرت زین العابدین رضی اللہ تعالی عنہ نے فرمایا ایک بخیل آدمی ہے ۔ بخیل آدمی سے کبھی بھی دوستی نہ کرنا کیونکہ بخیل آدمی اس وقت دھوکہ دیتا ہے جب ہمیں اس کی سب سے زیادہ ضرورت ہوتی ہے ۔

دوسرا جھوٹا آدمی ہے ۔ جھوٹا آدمی ہمیشہ دور کی چیز کو نزدیک اور نزدیک کی چیز کو دور بتائے گا ۔ جھوٹا آدمی تمہیں ہمیشہ دھوکے میں رکھے گا ۔

یہ بھی پڑھیں
وہ لوگ جو کردار کی بلندیوں پر پہنچے

تیسرا آدمی فاسق ہے ۔ فاسق ادمی تمہیں ایک لقمے کےبدلے یا پھر ایک لقمے سے کم کے بدلے بھی فروخت کر دے گا ۔ بیٹا کہنے لگا ابا جان ایک لقمہ میں فروخت کرنے کی تو سمجھ آتی ہے. لیکن ایک لقمہ سے بھی کم میں فروخت کرنے کا کیا مطلب ہے ؟ حضرت امام زین العابدین رضی اللہ تعالی عنہ نے فرمایا کہ ایک لقمہ سے بھی کم کا مطلب یہ ہے کہ وہ تمہیں ایک لقمہ کی امید پر بھی جبیچ دے گا ۔

حضرت امام زین العابدین رضی اللہ تعالی عنہ نے اپنے بیٹے سے فرمایا کہ چوتھا شخص قطع رحمی کرنے والا ہے ۔ ایسے شخص کو کبھی بھی اپنا دوست نہ بنانا۔ کیونکہ قرآن پاک میں ایسے شخص پر بار بار لعنت کی گئی ہے ۔

Leave a Reply