حضرت کعب بن عجرہ

حضرت کعب بن عجرہ رضی اللہ عنہ

حضرت کعب بن عجرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے چار بیٹے چھوڑے جو حدیث کے راویوں میں سے ہیں ۔ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے بیٹوں کے نام یہ ہیں حضرت اسحاق ، حضرت عبدالملک ، حضرت محمد ، حضرت ربیع ۔ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کا ایک ہاتھ کسی غزوہ میں شہید ہو گیا تھا ۔ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے مروی احادیث کی تعداد 47 ہے ۔

حمایت حق اورحب رسول صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم 2 چیزیں حضرت کعب رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے اخلاق میں نہایت روشن ہیں ۔ نبی کریم خاتم النبیین حضرت محمد مصطفی صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم نے ایک روز خطبہ دیا ۔ اس خطبہ میں مسلمانوں کی ایک آئندہ خانہ جنگی کا تذکرہ بھی کیا گیا تھا ۔ حضرت کعب رضی اللہ تعالیٰ عنہ بیٹھے ہوئے تھے ۔ ان کا بیان ہے کہ ایسا معلوم ہو رہا تھا کہ جیسے وہ وقت میرے سامنے آگیا ہے کہ اتنے میں ایک شخص چادر اوڑھے ہوئے سامنے سے گذرے ۔

آنحضرت صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم نے کہا اس روز یہ شخص حق پر ہوگا ۔ حضرت کعب رضی اللّٰہ تعالیٰ عنہ فوراً اٹھے اور اس شخص کا بازو پکڑ کر کہا یا رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم ! یہ شخص ؟ تو آپ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم نے فرمایا ہاں ۔ حضرت کعب رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے چہرہ دیکھا تو وہ حضرت عثمان رضی اللہ تعالیٰ عنہ تھے۔

طبرانی کی کتاب الاوسط میں ہے کہ ایک دن حضرت کعب رضی اللہ تعالیٰ عنہ نبی کریم خاتم النبیین حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کی خدمت میں آئے تو آپ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کے چہرۂ مبارک (بھوک کی وجہ سے ) کو متغیر دیکھ کر جلدی سے واپس چلے گئے ۔ راستہ میں ایک یہودی اپنے اونٹ کو پانی پلا رہا تھا تو حضرت کعب رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے فی ڈھول ایک چھوہارے کے حساب سے اس کے ہاں کچھ دیر مزدوری کی اور پھر کچھ چھوہارے جمع ہو گئے تو خدمت اقدس صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم میں لے کر حاضر ہوئے اور آپ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کے سامنے پیش کیے ۔

یہ بھی پڑھیں
حضرت کعب بن عجرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ

حضرت کعب بن عجرہ رضی اللہ عنہ” ایک تبصرہ

Leave a Reply