حضرت عمار بن یاسر

حضرت عمار بن یاسر رضی اللہ تعالیٰ عنہ

حضرت عمار بن یاسر رضی اللہ تعالیٰ عنہ نبی کریم خاتم النبیین حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کے جانثار صحابی ہیں ۔

آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کا نام عمار بن یاسر رضی اللہ تعالیٰ عنہ ہے ۔ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی کنیت حضرت ابو یقظان رضی اللہ تعالیٰ عنہ ہے ۔ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ حضرت یاسر بن عامر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے بیٹے ہیں ۔ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے والد بھی صحابی ہیں ۔ حضرت عمار بن یاسر رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے دور اسلام کے شروع میں ہی اسلام قبول کیا تھا ۔ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے والد حضرت یاسر رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی والدہ حضرت سمیہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ اسلام کے پہلے شہیدوں میں سے ہیں ۔

حضرت عمار بن یاسر رضی اللہ تعالیٰ عنہ حبشہ کی طرف ہجرت کرنے والوں کے سربراہ تھے ۔ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ جنگ بدر اور دیگر غزوات میں بھی میں شریک تھے ۔ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ صلح حدیبیہ میں بھی شامل تھے ۔ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ ام المومنین حضرت ام سلمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کے رضاعی بھائی ہیں ۔ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے بارے میں حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ و آلہ واصحابہ وبارک وسلم نے فرمایا کہ انہیں ایک باغی گروہ شہید کرے گا ۔ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی شہادت حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے دورِ خلافت میں 37ھ میں جنگ صفین میں ہوئی تھی ۔

حضرت عمار رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے والد حضرت یاسر رضی اللہ تعالیٰ عنہ قحطانی النسل تھے ۔ یمن حضرت یاسر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کا اصلی وطن تھا ۔ حضرت یاسر رضی اللہ تعالیٰ عنہ اپنے ایک مفقود الخبر بھائی کی تلاش میں اپنے دو بھائیوں حارث اور مالک کے ساتھ مکہ مکرمہ پہنچے ۔ وہ دونوں تو واپس لوٹ گئے، لیکن حضرت یاسر رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے یہیں قیام فرمایا ۔ حضرت یاسر رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے حضرت سمیہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے شادی کرلی ۔ جن سے حضرت عمار رضی اللہ تعالیٰ عنہ پیدا ہوئے، حضرت ابو حذیفہ نے حضرت عمار رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو ان کے بچپن ہی میں آزاد کرکے تاحیات دونوں باب بیٹے کو لطف ومحبت سے اپنےساتھ رکھا تھا ۔

یہ بھی پڑھیں
حضرت عمارہ بن حزم رضی اللہ تعالیٰ عنہ

حضرت عمار بن یاسر رضی اللہ تعالیٰ عنہ” ایک تبصرہ

Leave a Reply