نیکی کا صلہ

نیکی کا صلہ

سلطان سبکتگین غزنی کے مشہور بادشاہ رہے ہیں ، آپ کو بادشاہت ورثہ میں نہیں ملی تھی بلکہ سبکتگین بادشاہ کے خریدے ہوئے ایک غلام تھے ، سلطان سبکتگین کے پاس سوائے ایک گھوڑے اور شکار کے چند ہتھیاروں کے کچھ نہیں تھا ۔

ایک دن سلطان سبکتگین گھوڑے پر سوار ہوکر شکار کے لیے جنگل کی جانب چلے گئے ، جنگل میں ایک انتہائی خوب صورت ہرنی اور اس کا خوبصورت بچہ نظر آیا ۔ سلطان سبکتگین کو ہرنی کا بچہ پڑا پیارا لگا ، ان کے دل میں اس بچے کو پکڑنے کا خیال آیا ۔

سلطان سبکتگین نے گھوڑا ہرن اور بچے کے پیچھے لگا دیا ، تھوڑی سی کوشش کے بعد ہی سلطان بچے کو پکڑنے میں کامیاب ہوگئے ۔ ہرنی کا بچے کو گھوڑے پر رکھا اور خوشی خوشی گھر کو چل پڑے ۔

ہرنی نے جب یہ دیکھا تو بہت بے قرار ہوئی ، وہ مامتا کی ماری بچے کی مدد تو نہ کر سکتی تھی ، وہ مجبور ، لاچار اور اُداس و غمگین سلطان سبکتگین کے گھوڑے کے پیچھے چل پڑی ، سلطان سبکتگین نے پیچھے مڑ کر دیکھا تو ہرنی بھی گردن جھکائے گھوڑے کے پیچھے پیچھے آرہی تھی ۔

سلطان سبکتگین نے گھوڑا روک دیا ، ہرنی نے سر اوپر اٹھا کر دیکھا تو اس کی آنکھوں میں آنسو تھے ۔ اس کی نظریں سلطان سبکتگین سے رحم کی التجا کررہی تھیں ۔ سلطان سبکتگین کا دل بھر اٹھا اور وہ ہرنی کے بچے کو وہیں چھوڑ آئے ۔

ہرنی اپنے بچے کو پاکر بے حد خوش ہوئی ۔ ہرنی اور اس کا بچہ ہنسی خوشی جنگل کی طرف چلے گئے ، اسی رات سلطان سبکتگین کو خواب میں بشارت دی گئی کہ اللہ تبارک و تعالیٰ جلد ہی تمہیں غزنی کا بادشاہ بنا دے گا ۔ لہذا تم بادشاہ بن کر عدل و انصاف سے حکومت کرنا اور رعایا پر رحمت و شفقت کی نظر سے دیکھنا ۔ کچھ عرصہ بعد ہی سلطان سبکتگین غزنی کے بادشاہ بن گئے ۔

سلطنت غوریہ کا آخری حکمران سلطان شہاب الدین غوری

Leave a Reply