یقیناً یہی اصل روشنی ہے

یقیناً یہی اصل روشنی ہے

ایک دن حضرت نصیر الدین چراغ دہلوی نے اپنی مجلس میں بیٹھے ہوئے اپنے مریدوں سے پوچھا کہ بتاؤ زرا روشنی کب آتی ہے ؟

ایک مرید نے بڑے ادب سے حضرت کے حضور عرض کیا :حضرت صاحب” جب سفید اور سیاہ دھاگے میں واضح فرق نظر آنے لگے تو یہی روشنی ہوتی ہے” ۔ ان کے پاس بیٹھے ہوئے دوسرے مُرید نے عرض کیا “حضور جب دور کے درختوں کو دیکھ کر معلوم ہوجاۓ کہ ان درختوں میں سے بیری کا درخت کون سا ہے اور شیشم کا درخت کون سا تو پھر سمجھ جائیں کہ یہی روشنی ہے” ۔

مرشد نے یہ جواب سُن کر دیگر حاضرین کی طرف نظر دوڑائی تاکہ کوئی اور بھی جواب دینا چاہے تو دے لے ۔ لیکن کسی اور کے پاس کہنے کو مزید کچھ نہیں تھا ۔ اس پر مرشد نے مریدوں سے ارشاد کیا :
“جب تم کسی ضرورت مند کو دیکھو اور اس کے چہرے پر اس کی ضرورت کو پڑھ لو تو جان لو کہ”روشنی” آ گئی ہے۔ اور یقیناً یہی اصل روشنی ہے ۔

Leave a Reply