ہزاروں سال پرانی کشتی

ہزاروں سال پرانی کشتی کی باقیات دریافت

فرانس میں ماہرینِ آثارِ قدیمہ آج سے 1300 سال پُرانی کشتی کی باقیات کو محدود وقت میں بچانے کے لیے سر توڑ کوششیں کر رہے ہیں۔ 1300 سال پرانی اس کشتی کی لکڑی کی باقیات اس قدر نازک ہوچکی ہیں کہ اس لکڑی کو ہوا سے بھی نقصان پہنچ سکتا ہے۔ یہ کشتی فرانسیسی شہر بوڈو کے قریب دریافت ہوئی ہے۔

40 فٹ لمبی کشتی کی باقیات کچھ ایسے شہتیروں پر مشتمل ہے جن کو ایک لمبے عرصے سے آکسیجن اور روشنی نہیں مل سکی ۔ جس کی وجہ سے اس کشتی کے شہتیر ڈی ہائیڈریٹ ہوگئے ہیں اور بِکھرنے لگ چکے ہیں ۔تاہم محکمہ آثار قدیمہ کی ٹیمیں کشتی کے ان شہتیروں پر ہر 30 منٹ بعد پانی کا چھڑکاو کر رہے ہیں ۔ اور ان شہتیروں پر پانی تب تک چھڑکتے رہیں گے جب تک 200 کے قریب ان ٹکڑوں کو احتیاط کے ساتھ واپس نہیں ہٹا لیا جائے گا اور واپس پانی میں رکھ دیا جائے۔

ماہرین آثار قدیمہ کا کہنا ہے کہ فی الحال کشتی کی آخری آرام گاہ کا فیصلہ نہیں کیا گیا ہے کہ یہ کہاں رکھی جائے گی ۔ لیکن ممکنہ طور پر شہتیروں میں ریسن ڈال کر ان شہتیروں کو محفوظ کیا جاسکتا ہے یا اس ملبے کو دوبارہ اس جگہ دفن بھی کیا جا سکتا ہے ۔ جہاں سے یہ باقیات دریافت ہوئیں تھیں ۔

کشتی کی باقیات پہلی بار 2013 میں دریافت کی گئی تھیں لیکن حال ہی میں یہ باقیات مکمل طور پر واضح ہوئیں ہیں ۔ کشتی کا تعلق 680 ء سے 720 ء کے درمیان سے ہے ۔ اور اس کشتی کے متلعق یہ خیال کیا جارہا ہے کہ یہ فرانس کے جنوب مشرق اور اسپین کے شمال میں بہنے والے دریا میں اشیاء کو لانے اور لے جانے کا کام کرتی تھی ۔

یہ بھی پڑھیں
چوبیس کروڑ سال قدیم 55 فٹ طویل آبی مخلوق کی باقیات دریافت

Leave a Reply