نکاح نامے میں اضافی شرائط لکھوانا غیرقانونی قرار، لاہور ہائیکورٹ

بیوی کو طلاق دینے کی صورت میں نکاح نامے پر شوہر سے ہرجانہ ادا کرنے کے حوالے سے شرائط پر اہم فیصلہ جاری کر دیا گیا۔ نکاح کے وقت طلاق دینے کی شرط میں رقم، زیور، پراپرٹی، ہرجانے دینے کا وعدہ کرنا غیر قانونی قرار دے دیا گیا۔ لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس محمد اقبال نے فیصلہ جاری کر دیا۔

لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے کے مطابق شوہر کو اپنی بیوی کو طلاق دینے کا مکمل حق حاصل ہے۔ طلاق دینے میں شریعت اور قانون میں کوئی بھی شرط عائد نہیں کی گئی۔ اللہ تعالیٰ نے شوہر کو طلاق دینے کا مطلق حق دیا ہے۔ سپریم کورٹ بھی شوہر کو بیوی کو طلاق دینے سے روکنے کو غیرقانونی قرار دے چکی ہے۔ ناانصافی پر مبنی طلاق دینے سے متعلق نکاح نامے پر درج ہرجانے کی شرائط اسلامی قوانین کے یکسر خلاف ہیں۔ شوہر جب چاہے اپنی بیوی کو طلاق دے سکتا ہے۔ اس بات کو کسی بھی شرط کا پابند نہیں کیا جا سکتا۔

محمد سجاد نے فیملی کورٹ اور سیشن کورٹ جلالپور پیروالا کے فیصلوں کو لاہور ہائی کورٹ میں چیلنج کیا تھا۔ درخواست گزار کے مطابق 7 فروری 2016 کو ریحانہ سے شادی ہوئی۔ بیوی نے 5 لاکھ 52 ہزار کے جہیز، 5 تولے سونا، 25 ہزار جیب خرچ اور 5 مرلے کے مکان کا دعویٰ کیا۔ لاہور ہائیکورٹ نے درخواست گزار کی درخواست جزوی طور پر منظور کر لی۔

Leave a Reply