پلاٹ سرکاری ملازمین کا حق ہے تو صرف افسران کےلیے کیوں؟ جسٹس اطہر من اللّٰہ

ہم دوست نیوز:( اہم خبر) چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ اطہر من اللّٰہ نے کہا ہے کہ پلاٹ سرکاری ملازمین کا حق ہے تو صرف افسران کے بجائے تمام سرکاری ملازمین کوملنا چاہیے۔

تفصیلات کے مطابق اسلام آباد ہائی کورٹ نے وفاقی سرکاری ملازمین کو پلاٹوں کی الاٹمنٹ سے متعلق کیسز پر فیصلہ محفوظ کرلیا۔کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس ہائیکورٹ نے استفسار کیا ہے کہ پلاٹ سرکاری ملازمین کا حق ہے تو صرف افسران کے لیے کیوں؟

انہوں نے ریمارکس دیے کہ پانچ کروڑ کا پلاٹ 40 لاکھ روپے کا دیا جا رہا ہے، یہ باقی شہریوں سے زیادتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:ججز اور بیوروکریٹس کو پلاٹس کی الاٹمنٹ کا کیس ، اسلام آباد ہائیکورٹ نے فیصلہ سنا دیا

چیف جسٹس نے مزید کہا کہ اس رقم سے جو بے گھر مزدور ہیں انھیں گھر بناکر دے دیں، اسپتال کیوں نہ بنادیے جائیں؟ مہنگائی پر قابو کیوں نہ کیا جائے؟

چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کیس کی سماعت کے دوران سوال اٹھایا کہ کس طرح بنیادی حقوق کی خلاف ورزی کی اجازت دے دیں؟
انہوں نے کہا کہ مفاد کے ٹکراؤ کو اس معاملے سے کیسے ختم کیا جاسکے گا؟

Leave a Reply