مدینہ شریف

مدینہ شریف مکہ سے بھی افضل ہے

مدینہ منورہ کا پہلا نام یثرب (یعنی بیماریوں اور وباؤں کی بستی) تھا لیکن جب رسول کریم خاتم النبیین حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلَّم اس شہر کی طرف ہجرت فرما کر گئے تو مدینہ طیبہ (یعنی پاکیزہ زمین) ہو گیا ۔ حضور اکرم راحتہ العاشقین حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم نے فرمایا : مجھے اس بستی کی طرف ہجرت کا حکم دیا گیا ہے جو تمام بستیوں کو کھا جائے گی۔ لوگ اس کو یثرب کہتے ہیں حالاں کہ وہ مدینہ ہے اور وہ بستی لوگوں کو اس طرح پاک اور صاف کردے گی جیسے بھٹی لوہے کے میل کچیل کو دور کر دیتی ہے۔ (بخاری ، 1 / 617 ، حدیث : 1871)

نبی کریم خاتم النبیین صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم نے فرمایا مفہوم ہے : بے شک اللہ تبارک و تعالیٰ نے مدینہ شریف کا نام طابہ (یعنی پاکیزہ زمین)رکھا ہے۔
(مسلم ، ص 550 ، حدیث : 3357)

سرکارِ مدینہ راحت قلب و سینہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم نے فرمایا مفہوم ہے : جس نے مدینہ شریف کو یثرب کہا اس کو چاہئے کہ وہ اللہ تعالیٰ سے استغفار کرے (یہ یثرب نہیں ہے بلکہ) طیبہ ہے ، طیبہ ہے۔ (مسند احمد ، 6 / 409 ، حدیث : 18544)

حضورِ اکرم صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہٖ واصحابہ وبارک وسلَّم نے فرمایا : مدینہ شریف مکہ سے (بھی ) افضل ہے۔ (معجم کبیر ، 4 / 288 ، حدیث : 4450)

مدینے کے تاجدار حضرت محمد مصطفیٰ صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہٖ واصحابہ وبارک وسلَّم نے فرمایا : اے اللہ تعالیٰ جتنی مکہ میں برکت عطا فرمائی ہے مدینہ میں اس سے دگنی (برکت ) عطا فرما۔ (بخاری ، 1 / 620 ، حدیث : 1885)

مدینہ شریف میں مرنے کی فضیلت

Leave a Reply