نمازِ اشراق کی فضیلت

نمازِ اشراق کی فضیلت

نمازِ اشراق کی فضیلت میں نبی صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم سے متعدد احادیث وارد ہیں، جن میں سے کچھ یہ ہیں:

حضرت ابو زر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کہتے ہیں کہ نبی کریم خاتم النبیین حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ تعالیٰ علیہ و آلہ واصحابہ وبارک وسلم نے فرمایا جس کا مفہوم ہے کہ : (تم میں سے ہر ایک کے ہر ہر جوڑ پر ایک صدقہ واجب ہے، چناں چہ “سبحان اللہ” کہنا (بھی ) صدقہ ہے، “الحمد للہ” کہنا (بھی ) صدقہ ہے، “لا الہ الا اللہ” کہنا (بھی ) صدقہ ہے، “اللہ اکبر” کہنا (بھی ) صدقہ ہے، نیکی کا حکم دینا (بھی ) صدقہ ہے، برائی سے روکنا (بھی ) صدقہ ہے اور اس صدقے سے ( نماز ) اشراق کی 2 رکعتیں کافی ہو جاتی ہیں) مسلم: (1181)

نبی کریم راحۃ العاشقین حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلم کے فرمان کا مفہوم ہے : جو نماز فجر باجماعت ادا کرے اور اللہ تبارک و تعالیٰ کا ذکر کرتا رہے یہاں تک کہ آفتاب بلند ہوجائے پھر 2 رکعتیں پڑھے تو اس کو پورے حج اور عمرے کا ثواب ملے گا۔ (ترمذی ، 2 / 100 ، حدیث : 586)

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہُ تعالیٰ عنہ سے مروی ہے کہ حضور نبی کریم خاتم النبیین حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ واصحابہ وبارک وسلَّم نے ارشاد فرمایا مفہوم ہے: جو شخص نمازِ فجر سے فارغ ہو جانے کے بعد اسی جگہ پر بیٹھا رہے یہاں تک کہ اشراق کے نفل پڑھ لے اور اس دوران صرف خیر ہی بولے تو اس کے تمام گناہ بخش دئیے جائیں گے اگرچہ سمندر کی جھاگ سے بھی زیادہ ہوں۔
(ابوداؤد ، 2 / 41 ، حدیث : 1287)

ایک چڑیا کی دربار رسالت ﷺ میں حاضری

Leave a Reply