بیٹی کی لاش دو

بیٹی کی لاش دو ماہ تک گھر میں خراب ہوتی رہی ، وجہ والدین کی محبت یاکچھ اور

بیٹی کی لاش دو ماہ تک گھر میں خراب ہوتی رہی ، وجہ والدین کی محبت یاکچھ اور

جکارتہ : ( ہم دوست نیوز ) اطلاعات کے مطابق انڈونیشیا میں بیٹی کی بیماری کی وجہ سے موت کے بعد بھی والدین نے اس کی لاش کو دو ماہ گھر میں ہی رکھا۔ اور دفن نہ کیا ۔

تفصیلات کے مطابق انڈونیشیا میں ایک لڑکی کے والدین کو اس کی موت کا اتنا دکھ تھا ۔انہوں نے اپنی بیٹی کو مردہ ماننے سے انکار کر دیا ۔اور اسے دو ماہ تک دفن کرنے کی بجائے گھر میں ہی رکھا ۔

لڑکی کے والدین کا کہنا ہے کہ انہیں اپنی بیٹی کے مر جانے کا یقین ہی نہیں ہے ۔ وہ یہی سوچتے رہے کہ ان کی بیٹی دوبارہ زندہ ہو جائے گی ۔ یہاں تک کہ لڑکی کے ماں باپ یہ دعائیں بھی مانگتے رہے کہ لڑکی دوبارہ زندہ ہو جائے ۔

پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ لڑکی کی لاش خراب ہونے کی وجہ سے جب محلے والوں کا جینا دوبھر ہو گیا ۔ تو محلے والوں نے فیصلہ کیا کہ وہ اس گھر کی تلاشی لیں گے۔ کہ آخر اس گھر سے اتنی بدبو کیوں آتی ہے ۔ سب محلے والوں نے زبردستی ان کے گھر کی تلاشی لی۔ تو وہاں سے محلے والوں کو ان کی بیٹی کی گلی سڑی لاش ملی ۔ جسے محلے والوں نے زبردستی دفن کیا ۔

یہ بھی پڑھیں
فیصل آباد نالے سے ملنے والی دو لڑکیوں کی لاشوں کا معمہ حل

پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ اس لڑکی کی عمر چودہ سال ہے ۔ اس کی موت ٹی بی کی وجہ سے ہوئی ہے ۔ والدین کو اس کی موت کا اتنا دکھ تھا کہ انہوں نے اس بچی کو دفن کرنے کی بجائے ۔اپنی آنکھوں کے سامنے اپنے گھر میں ہی رکھا ۔ جس کی وجہ سے بچے کی لاش کافی خراب ہوگئی ہے ۔

اس بچی کی تدفین بھی محلے والوں نے زبردستی کی ہے۔ کیونکہ والدین کو ابھی تک یہ یقین تھا کہ ان کی بیٹی دوبارہ زندہ ہو جائے گی۔

Leave a Reply